I Asked Forgiveness From ALLAH for Watching Movies – Should I Sell My TV Now?

data-full-width-responsive="true">

 (اردو ترجمہ نیچے دیکھیں)

Question:
I used to have a TV and VCR at home, and it is well known that most of what is shown is either haraam or very close to it. Now, praise be to Allaah, I keep away from these things and I have repented to Allaah. I have bought a piece of land to build a mosque on it, and I need some money to pay off the rest of the price of the land. My question is: can I sell these machines (the TV and VCR) and use the money to pay someone to build a mosque on this land, or to help build the mosque? If I can sell these machines, to whom can I sell them? – knowing that most of what is shown on these machines is evil.

 

Answer:

Praise be to Allaah.

Do not sell them, because it is most likely that whoever buys them from you will use them for leisure purposes and haraam things. [?]. Instead, destroy what you have in order to get rid of something evil, and you will have the reward for that. But if you find someone who you think will most likely use them for permissible things, then it is OK for you to sell them to him.

From Fataawaa al-Lajnah al-Daa’imah,
======================================================================================

سوال:: میرے گھرمیں ٹی وی اور وی سی آر ہوا کرتا تھا۔ اور یہ بات تو بلکل صاف ہے اب کہ ان چیزوں پر کوئی اچھی چیز تو نہیں دیکھی جاتی۔ اللہ کا شکر ہیکہ میرا رحجان مذھب کی طرف بڑھنے سے میں نے ان سب کاموں سے توبہ کر لیا۔ میں نے ایک زمین خریدی ہے، جس پر میرا ارادہ ایک مسجد بنوانے کا ہے۔ خریدی گئی زمین کے بقایا جات ادا کرنے کے لئے مجھے پیسے چاہئیں۔
میرا سوال یہ ہیکہ میں یہ ٹی وی اور وی سی آر بیچ کر اس کے پیسے مسجد کی تعمیر میں لگا سکتا ہوں؟ یا وہ پیسے کسی اور اچھے کام میں لگا سکتا ہوں؟ اور اگر میں یہ بیچوں بھی تو کس کو بیچوں؟ یہ جانتے ہوئے کہ ٹی وی پر جو کچھ چلتا ہے وہ بہت ہی برا ہوتا ہے۔

جواب:: الحمد للہ

یہ مت بیچیں۔ کیونکہ ممکن ہیکہ جسے آپ بیچیں وہ غلط کاموں میں ہی انہیں استعمال کرے۔ اور اپنا وقت اور آخرت دونوں برباد کرتا رہے۔ اس کی بجائے ، جو کچھ آپکے پاس ہے، اسے ضائع کر دیں۔ تاکہ گناہ کے کام نہ پھیل سکیں، اور اس کا اجر خود اللہ دے گا آپکو۔
لیکن اگر آپ کسی ایسے شخص کو تلاش کرنے میں کامیاب ہوتے ہیں جس کا آپکو واقعی میں لگتا ہے کہ وہ یہ چیزیں درست مقاصد کے استعمال کرنے کے لئے لے رہا ہے، تب اس کے ہاتھ یہ ٹی وی اور وی سی آر بیچنے میں حرج نہیں۔

Source : IslamQA
Translated and Edited By Content Editor of IslamicGathering

data-full-width-responsive="true">

Check Also

Hayrat Angaaz Report in Urdu

data-full-width-responsive="true"> data-full-width-responsive="true">