Dealing With New Situations

 

Question:
Sometimes the Muslim is faced with a situation concerning which he does not know what position he should take, whether those matters are political, da’wah-related (religious), social or even personal. How can I find out the correct way of dealing with a situation with which I am faced?

 

Answer:

Praise be to Allaah.I thank you for your question and ask Allaah to grant us and you strength, steadfastness and wisdom, and to show us what is true and help us to follow it, and to show us what is false and help us to avoid it, and not to let it confuse us and lead us astray… With regard to what you asked about, my comments on it are as follows:

You should note that we are not obliged to define our stance or opinion on every issue or event that occurs, simply because much of what occurs does not concern us. With regard to the things that do concern us and on which we should form opinions, they are of different types:

1 – Matters which because of their depth and breadth go beyond the limits of our knowledge and understanding. Concerning these matters we must consult the opinions of specialists, scholars, researchers or experts, as much as possible.

2 – Matters which are so clear that they have become the talk of gatherings and the media. We can form an opinion on such matters by reconciling between the views of those whom we trust and some of the reports.

3 – Matters within our own private circle. These require us to look at all the alternatives and weigh up the pros and cons of each, then compare them objectively. This will enable us to form an initial idea, then we can consult others and seek the opinions of people who have prior experience in this field, or those whose opinions we trust. Whoever consults people will benefit from their experience and knowledge. As time goes by and we make mistakes and benefit from our experience, we will accumulate experience and more understanding, and will develop the ability to evaluate things. In the light of this experience we will be able to form our own opinions.

May Allaah help you and protect you, and make you steadfast in adhering to the path of truth and goodness.

Ahmad al-Muqbil
===================================================

سوال:: اکثر ایسا ہوتا ہیکہ ہم بحیثیت مسلمان ایسی صورتحال میں پھنس جاتے ہیں جس میں کچھ سمجھ نہیں آرہا ہوتا کہ کیا کریں۔ سمجھ نہیں آتا کہ ان معاملات کو سیاسی بنیادوں پر دیکھیں، دینی سطح پر دیکھیں، یا معاشی اور ذاتی نظریے سے دیکھیں۔ مجھے کیسے پتا چلے گا کہ جس مسئلے کا میں شکار ہوں اس کو دیکھنے کے لئے کونسا نظریہ بہتر ہے؟

جواب:: الحمد للہ

آپ کے سوال کا شکریہ۔ اور اللہ سے دعا ہیکہ ہمیں طاقت، استحکام اور دانش مندی عطا فرمائے تاکہ ہم سچ اور صحیح راستے کا انتخاب کر سکیں اور ہماری مدد فرمائے اس راستے پر چلنے میں۔ اور اللہ سے دعا ہیکہ اسی طرح غلط راستے کی ہم میں پہچان پیدا کرے اور اس سے ہمیں دور رکھے تاکہ ہم بھٹک نہ جائیں۔ آمین۔

جہاں تک آپ کے سوال کا تعلق ہے، میری اس بارے میں یہ رائے ہے:

-1 ایسے معاملات جو کہ بہت ہی گہرے اور نازک ہوں، اور جو ہمارے علم اور سمجھ سے بالاتر ہوں۔۔ ایسی صورت میں ہمیں مختلف نظریات کو سامنے رکھتے ہوئے اس کا انتخاب کرنا چاہئے جو قابلِ بھروسہ ہو۔

-2 ایسے معاملات جو کہ اتنے عام ہو چکے ہوں کہ ہر عام اور خاص کی زبان پر ہوں۔ ایسے میں ہم ان کے بارے میں اپنی رائے ، مختلف نظریات اور حقائق کی بنیاد پر دے سکتے ہیں۔

-3 ایسے معاملات جو ہمارے ذاتی دائرہ کار میں آتے ہوں۔ ایسے میں ہر نظریے سے اس معاملے کو دیکھیں اس کے فائدے اور نقصانات کے ساتھ۔ اور پھر ان کا جائزہ لیں۔ اس سے ابتدائی طور پر ایک آسانی ہو جائیگی۔ اس کے بعد دوسروں کے اس بارے میں مشورے بھی لیئے جا سکتے ہیں۔ ایسے لوگوں سے جو اپنے علم سے دوسروں کو فائدہ دیتے ہیں۔ وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ ہمارے تجربے میں بھی اضافہ ہوتا جاتا ہے۔ اور پھر ھم چیزوں کو بہتر طور پر جائزہ لینے کے قابل ہو جاتے ہیں۔

اللہ آپ کی مدد اور حفاظت فرمائے۔ اور سچائی کے راہ پر چلنے میں آپ کو اسقامت عطا فرمائے۔ آمین۔

 

 

Source : IslamQA
Translated and Edited By Content Editor of IslamicGathering

Check Also

Hayrat Angaaz Report in Urdu