Mixed Boys & Girls Gatherings

data-full-width-responsive="true">

 

Question:
I am very confused about the subject of free mixing, and have been reading the fatwas regarding this subject on your website. In my opinion, and I could be wrong, there is a contradiction between fatwa 79549, stating that it is not permissible for a man to teach girls without a barrier, and fatwa 113431, stating that it is permissible for a girl to remain at a mixed university because of her “social situation”.
Where I live, in Morocco, free mixing is normal during family gatherings and even with friends, and many imams there say that it is permissible, with no guidelines as far as how the women should be covered. Of course I completely disagree with this. How is one supposed to uphold family ties when it is always in a mixed environment? We can invite them to our house, where there would be no mixing, but they still want us to go to their house. Do we go to their house anyway, knowing that there will be much fitna (temptation), with free mixing and unveiled women? May Allah guide our ummah (community) to the straight path.
I just don’t see how one can avoid all of these problems, but I believe it is our duty to do so as much as possible. Basically, my question is, which one is the bigger priority, upholding family ties or avoiding an environment where there is free mixing; men speaking openly with women, who are also unveiled in most cases? Also, are we allowed to refuse an invitation if we know the environment will be as the one described above? Also, who is the family with whom we must uphold family ties? Does it include cousins (even if they are of the opposite sex), or only mahrams (close relatives to whom marriage is forbidden)?

 

Answer:

Praise be to Allaah.

 

It is good that you believe that it is one of our duties to do our best to avoid that haraam (impermissible) free mixing. Let us tell you that we do not object to upholding family ties at all; rather we promote and encourage that, because it is part of upholding the ties of kinship (silat al-rahm) that is enjoined upon us by Allah and His Messenger.

But more important than that, the questioner should understand that there is no contradiction between the two matters at all. It is possible to keep away from haraam free mixing and it is also possible to uphold ties of kinship. Islam enjoins both matters, so it is not possible for there to be any contradiction between them.

In that case, what you should do in your country is try to uphold the ties of kinship and avoid the free mixing that is widespread in your country. There are many people who have been able to do that and live their lives in a natural manner.

But it is important for the individual to have sufficient resolve and keenness to do that.

If when people visit you, you allocate one place for women to sit and another place for men, and you show your keenness to implement this segregation, then when you visit your relatives or other people, they may follow your wishes with regard to this segregation when they realize that you are very keen on that, no matter how small the house is.

With regard to chance meetings in the street and in the entry way to the house if it has only one entrance, and so on, this is something that is not forbidden in sharee‘ah (Islamic law) and the rulings on it are not strict; what is prescribed is to be cautious with regard to this matter so that it does not become the norm and a person should not do it if it is possible to avoid it.

Finally, you should note that attaining Paradise requires some effort, hard work and striving. Paradise is surrounded with difficult matters that people may find hard, but one needspatience in obeying his Lord, and that is the greatest kind of patience. The Messenger of Allah (blessings and peace of Allah be upon him) said: “Knowledge is only attained by striving to learn and patience is only attained by striving to be patient and the one who seeks good will be given it and the one who seeks to avoid evil will be protected from it.” Narrated by al-Tabaraani in al-Awsat, 2663; classed as hasan (sound) by al-Albaani.

 

And Allah knows best.

 

================================================

 

 

سوال::  مجھے مخلوط (مکس) گیدرنگ کے معاملے میں بہت پریشانی ہو رہی ہے۔ اور اس بارے میں میں نے بہت سے فتوے بھی پڑھے۔

 

میں مراکش میں رہتی ہوں۔ جہاں مرد اور عورت کی مکس گیدرنگ بہت عام ہے۔ بہت سے علما سے میں نے سنا کہ اگر عورت خود کو ڈھکی ہوئی ہو تو ایسی گیدرنگ میں ہونے کی ممانعت نہیں۔ لیکن اگر یہی چیز خاندان میں ملنے جلنے کے حوالے سے ہو تو کیا کیا جائے؟ کیونکہ خاندان میں جوان لڑکے اور لڑکیاں بھی ہوتے ہیں۔ ہم اسی نامحرم والے ماحول کو، جہاں لڑکے لڑکیاں ساتھ ہوں،اس لئے ان رشتے داروں کو گھر نہیں بلاتے لیکن وہ ہمیں زبردستی اپنے گھر آنے کی دعوت دیتے ہیں، جہاں ظاہر ہے اسی قسم کا ہی ماحول ہے۔ کیا ہمیں ان کے گھر نہیں جانا چاہئے؟ اس وجہ سے کہ وہاں مخلوط ماحول ہوتا ہے اور ایسے ماحول میں خواہشات کا انسانی دل اور دماغ میں ابھرنا بھی فطری بات ہے۔

 

مجھے نہیں پتہ کہ ان مسائل کا کیا حل ہے، لیکن اتنا پتہ ہیکہ اپنی ہر ممکن کوشش کرنی چاہئے درست راہ پر چلنے کی۔

 

اصل میں میرا سوال یہ ہیکہ زیادہ ضروری کیا چیز ہے، خاندان والوں سے قرابت داری قائم رکھنا یا پھر انہیں نظر انداز کرنا، صرف اس لئے کہ ان کی طرف جانے سے مکس ماحول کا خطرہ رہتا ہے، جس میں لڑکے لڑکیاں سب ساتھ ہوتے ہیں، اور جہاں پردے کا انتظام نہیں ہوتا، اور کزنز ایکدوسرے سے کھلے عام خوش گپیوں میں مصروف رہتے ہیں۔ کیااگر ہمیں ایسے رشتے دار گھر بلائیں تو ہم منع کر دیا کریں؟ اور یہ بھی بتائیں کہ ہمیں کس قسم کے رشتے داروں کے ساتھ قرابت داری قائم کیے رکھنا چاہیے؟ کیا ان میں کزنز بھی شامل ہیں، یا صرف محرم رشتے؟

 

براہ کرم رہنمائی فرمائیں۔

 

جواب:: الحمد للہ

بہت اچھی بات ہیکہ آپ نے احساس رکھا کہ ہمیں حرام کاموں اور عادات سے بچنا چاہئے۔ ہم کبھی بھی رشتے داروں کے ساتھ قطع تعلقی کی بات نہیں کرتے، بلکہ ہم ان کے ساتھ قرابت داری بڑھانے پر بہت زیادہ زور دیتے ہیں۔ کیونکہ یہ صلہ رحمی میں آتا ہے جو اللہ کو بہت پسند ہے۔

دوسری چیز یہ کہ، آپ ان دونوں معاملات کو مکس مت کریں۔ ایک مخلوط (لڑکا لڑکی کی مکس گیدرنگ) اور خاندان میں باہمی قرابت قائم رکھنے کا آپس میں کوئی تعلق نہیں۔ آپ ایسی گیدرنگ میں نہ جا کر بھی خاندان مین رشتے داری اور محبت قائم کیے رکھ سکتی ہیں۔ اسلام دونوں معاملات کا حکم دیتا ہے۔

دوسری جانب، آپ جس ملک میں رہ رہی ہیں، اس کے ماحول کو دیکھتے ہوئے آپ مکس گیدرنگ سے دور رہیں۔ اور ساتھ ساتھ رشتے داروں سے قربت بھی روا رکھیں۔ کوشش کرنے سے ایسا بلکل ممکن بھی ہے۔

لیکن ایسا کرنے کے لئے ایکدوسرے کے ساتھ تعاون کرنا بہت ضروری ہے۔

مثلاً اگر کوئی آپ سے ملنے آئیں تو آپ مرد حضرات کے بیٹھنے کے لئے ایک جگہ مقرر کر لیں اور عورتوں کے لئے دوسرے جگہ۔ اور ان کو بہت شفقت کے ساتھ اس کا عادی بنا لیں۔ اس طرح جب آپ ان کی طرف جائینگے تو وہ آپ کے شوق اور عادات کو دیکھتے ہوئے آپ کے لئے بھی ویسا ہی انتظام اور ماحول بنا دینگے جیسا آپ انہیں اپنے گھر میں دیتے ہیں، چاہے گھر کتنا ہی چھوٹا کیوں نہ ہو۔

جہاں تک بات ہیکہ ان میں سے کوئی اتفاقیہ طور پر گلی میں مل جائیں یا گھر سے آنے جانے کا راستہ ایک ہی پڑتا ہو تو اس معاملے میں شرعیہ میں سختی نہیں۔ بس اس بات کا دھیان رکھیں کہ خود کو ان چیزوں کا عادی نہ بنا لیں۔

آخری بات یہ کہ، یہ بات ذھن میں رکھیں کہ جنت کو پانے کے لئے کچھ کوششیں کرنی پڑتی ہیں۔ جنت تک جانے کے راستے میں بہت سے مشکل معاملات بھی پیش آجاتے ہیں جس کے لئے بہت صبر چاہئے ہوتا ہے۔ اللہ کے نبی صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے فرمایا، ‘علم کوشش سے حاصل ہوتی ہے، اور صبر، صرف صبر کے لئے کوشش کرنے سے آتی ہے۔ اور جو نیکی کی طرف قدم بڑھائے اسے وہ عطا کردی جاتی ہے اور اگر کوئی برائی سے دوری اختیار کرے تو اسے اس کے خلاف تحفظ عطا کر دی جاتی ہے۔‘

الطبرانی – الاوسات ۔ 2663

 

 

 

Source : IslamQA
Translated and Edited By Content Editor of IslamicGathering

data-full-width-responsive="true">

Check Also

Hayrat Angaaz Report in Urdu

data-full-width-responsive="true"> data-full-width-responsive="true">