What Does ISLAM Say About Self Defense?

data-full-width-responsive="true">

 Question:

What is the viewpoint of Islam toward self-defense? Is it a right? Are there conditions on that right? Does the Qur’an speak to the issue of self-defense?

 Answer:

Praise be to Allaah.

Protecting oneself and one’s honour, mind, wealth and religion is a well-established basic principle in Islam. These are the five essentials which are well known to Muslims. A person has to defend himself; it is not permissible for him to consume that which will harm him, and it is not permissible for him to allow anyone to harm him. If a person or a vicious animal etc attacks him, he has to defend himself, or his family or his property, and if he is killed he is counted as a shaheed (martyr), and the killer will be in Hell.

If the harm that will result from this aggression is little and he gives up defending himself for the sake of Allaah, then undoubtedly Allaah will compensate him for that, so long as this does not cause any increase in the wrongdoing against him or anyone else.

Shaykh ‘Abd al-Kareem al-Khudayr

===================================================

 

سوال::  سیلف ڈیفینس (اپنے ذاتی دفاع) کے بارے میں اسلام کیا کہتا ہے؟ کیا سیلف ڈیفینس درست ہے؟ کیا اس کے لئے کوئی شرائط ہیں؟ کیا اسلام سیلف ڈیفینس کے موضوع پر کچھ فرماتا ہے؟

جواب::  الحمد للہ۔

اپنی جان کی حفاظت، عزت کی حفاظت، سوچ، مال، اور دین کی حفاظت اسلام کی بہت ہی بنیادی اصولوں میں شامل ہیں۔ یہ پانچ بہت ہی ضروری چیزیں ہیں مسلمانوں کے لئے۔ ایک شخص کو اپنا دفاع کرنا چاہئے۔ جو چیز اسے نقصان پہنچائے اس سے ڈرنا نہیں چاہئے۔ اور نہ ہی اسے اس بات کی اجازت ہیکہ وہ دوسروں کو موقع دے کہ اسے نقصان پہنچائیں۔ مثلاً اگر ایک انسان یا جانور اس پر حملہ کرے تو اسے اپنا دفاع کرنا پڑے گا۔ یا اپنے خاندان، جائیداد کی حفاظت کرنی پڑے گی۔ اور اگر ایسا کرتے ہوئے وہ مر گیا تو وہ شہید کہلائے گا۔ اور اسے شہید کرنے والا جہنم کا حقدار ہوگا۔

اور اگر اس کو پہنچنے والا نقصان چھوٹا ہو، اور وہ اپنا دفاع کرنا چھوڑ دے محض اللہ کی خاطر، تو یقیناَ اللہ اسے اس کا بہتر بدلہ دے گا۔ جب تک کوئی غلط چیز یا بڑانقصان پہنچنے کا اندیشہ نہ ہو، وہ اللہ کی خاطر معاف کر دے۔ اور اگر ڈر ہو کہ اس کے دفاع نہ کرنے سے کوئی بڑا نقصان یا غلط کام ہو گا، تو وہ اپنا دفاع ضرور کرے۔

 

Source : IslamQA
Translated and Edited By Content Editor of IslamicGathering

data-full-width-responsive="true">

Check Also

Hayrat Angaaz Report in Urdu

data-full-width-responsive="true"> data-full-width-responsive="true">